Top Menu

Drop Down MenusCSS Drop Down MenuPure CSS Dropdown Menu

Thursday, September 22, 2016

راولپنڈی میں سبزی بیچنے والا دہری صلاحیتوں کا حامل پاکستان کا انوکھا بولر

21 سالہ یاسر جان کا تعلق خیبرپختونخوا کے ضلع چارسدہ سے ہے جو 12 سال قبل روزگار کی تلاش میں اپنے بھائی کے ہمراہ راولپنڈی آگئے تھے۔ یاسر جان اپنے بھائی کی سبزی کی دکان پر کام کرتے ہیں اور جب انہیں معلوم ہوا کہ راولپنڈی میں کرکٹ ٹیلنٹ کی تلاش میں 
لاہور قلندرز کی جانب سے کیمپ لگایا گیا ہے تو وہ بھی اپنی قسمت آزمانے آگئے۔


کیمپ کے دوران یاسر جان نے دائیں ہاتھ سے بولنگ ٹرائل دیا اور ابتدا میں وہ لاہور قلندرز کے ہیڈ عاقب جاوید کو متاثر نہ کرسکے لیکن جب انہوں نے ہیڈ کوچ کو بتایا کہ وہ بائیں ہاتھ سے بھی بولنگ کر سکتے ہیں تو وہ ہیڈکوچ کی حسرت کی انتہا نہ رہی اور نوجوان بولر نے بائیں ہاتھ سے بھی اسی رفتار سے بول کرائی جو وہ دائیں ہاتھ سے کر سکتے ہیں۔
یاسر جان نے ٹرائل کے دوران 145 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گیندیں کرائیں جب کہ وہ اسی رفتار سے دونوں ہاتھوں سے گیند کرانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ یاسر جان کی صلاحیتوں کو دیکھتے ہوئے عاقب جاوید نے ان سے 10 سال کا معاہدہ کرلیا جس کے دوران وہ انہیں بولنگ کے گر سکھائیں گے۔
عاقب جاوید نے اس سے قبل پائپ کی فیکٹری میں ملازمت کرنے والے ٹیلنٹ کو تلاش کر کے قومی ٹیم کا حصہ بنایا تھا اور وہ ٹیلنٹ آج محمد عرفان کے نام سے دنیا بھر میں جانا جاتا ہے۔ اسی طرح یاسرجان کے بارے میں بھی خیال کیا جارہا ہے کہ وہ اپنی صلاحیتوں کی بدولت جلد قومی ٹیم کا حصہ بن کے پاکستان کا نام دنیا بھر میں مزید بلند کریں گے۔